Books on Ghamidi

Discussion in 'Pakistani eBooks and Documents' started by Patriotic_Pakistani, Mar 22, 2009.

  1. Patriotic_Pakistani

    Patriotic_Pakistani New Member

    Joined:
    Jan 6, 2009
    Messages:
    371
    Likes Received:
    0
    These are two books which discuss the ideas of Ghamidi, and how they differ from Islamic perspective. If somebody has more please add here. Thanks

    Book 1:
    Ghamdi Mazhab kiya ha?

    Book 2:
    Islam aur Moseeqi Ghamidi Ka Radd
     
  2. sakoot

    sakoot Journalists

    Joined:
    Feb 5, 2009
    Messages:
    3,600
    Likes Received:
    0
    Location:
    sakoot main
    very useful post thanks a lot.realy very good .may bohat arse se is ki talash may thi .excellent
     
  3. Patriotic_Pakistani

    Patriotic_Pakistani New Member

    Joined:
    Jan 6, 2009
    Messages:
    371
    Likes Received:
    0
    You are welcome.... but please spread it to as many people as you can... SPREAD IT... thanks
     
  4. asim99

    asim99 Banned

    Joined:
    May 12, 2008
    Messages:
    2,646
    Likes Received:
    3
    just wondering if the uploader of these ebooks ever listens to music?
     
  5. Pakistani111

    Pakistani111 New Member

    Joined:
    Jan 8, 2009
    Messages:
    1,092
    Likes Received:
    0
    i don't think so, does somebody earn sawab in listening to music?
     
  6. InTrOvErT

    InTrOvErT New Member

    Joined:
    Apr 27, 2009
    Messages:
    17
    Likes Received:
    0
  7. ejazji

    ejazji New Member

    Joined:
    Nov 19, 2008
    Messages:
    2
    Likes Received:
    0
    Ghamidi was born on April 18, 1951 in a peasant family of Kakazai tribe from Jiwan Shah near Sahiwal, Pakistan.His early education included a modern path (Matriculation from Islamia High School, Pakpattan in 1967), as well as a traditional path (Arabic and Persian languages, and the Qur'an with Mawlawi Nur Ahmad of Nang Pal). He later graduated from Government College, Lahore, with a BA Honours in English in 1972.Initially, he was more interested in literature and philosophy. Later on, he worked with renowned Islamic scholars like Sayyid Abul Ala Maududi and Amin Ahsan Islahi on various Islamic disciplines particularly exegesis and Islamic law.

    Ghamidi's father was a follower of Sufism. In the later years of his life, Ghamidi changed his opinion about Sufism. He wrote a criticism on Sufism in his book Burhan and also didn't include it in his book Mizan, which is a comprehensive treatise on the contents of Islam.



    Ghamidi worked closely with Sayyid Abul Ala Maududi (سيد أبو الأعلى المودودي, alternative spelling Syed Maudoodi; often referred to as Maulana Maududi) (1903–1979) for about nine years before voicing his first differences of opinion, which led to his subsequent expulsion from Mawdudi's political party, Jamaat-e-Islami in 1977. Later, he developed his own view of religion based on hermeneutics and ijtihad under the influence of his mentor, Amin Ahsan Islahi (1904–1997), a well-known exegete of the Indian sub-continent who is author of Tadabbur-i-Qur’an, a Tafsir (exegeses of Qur'an). Ghamidi's critique of Mawdudi's thought is an extension of Wahid al-Din Khan’s criticism of Mawdudi. Khan (1925- ) was amongst the first scholars from within the ranks of Jamaat-e-Islami to present a fully-fledged critique of Mawdudi’s understanding of religion. Khan’s contention is that Mawdudi has completely inverted the Qur’anic worldview. Ghamidi, for his part, agreed with Khan that the basic obligation in Islam is not the establishment of an Islamic world order but servitude to God, and that it is to help and guide humans in their effort to fulfill that obligation for which religion is revealed. Therefore, Islam never imposed the obligation on its individual adherents or on the Islamic state to be constantly in a state of war against the non-Islamic world. In fact, according to Ghamidi, even the formation of an Islamic state is not a basic religious obligation for Muslims

    ---------- Post added at 04:12 PM ---------- Previous post was at 04:05 PM ----------

    Well I personally like his style of discourse. Dr. Khalid Zaheer is one of his students, both of them have come up with a unique methodology where they set a side Ahadith and debate issues on the basis of Quran. (You will find that they mostly quote from Quran, even when it is asked what is muslim view on this and that, they only quote Quran). I am not of a view that they don’t believe in the validity of Hadith but the have devised this new method. where Hadith is treated secondary... .

    Is Ghamidi Sahib Munkire Hadith?
    Response:
    Ghamidi Sahib has written a book “Al-Meezan” in which he has mentioned the outcome of thirty years of his research of what the teachings of Islam are. The book is comprised of more than seven hundred (700) pages. In his book, he has quoted one thousand and twenty-eight (1028) ahadith to explain various aspects of Islam (more than one hadith per page!). In the beginning of the book he has elaborated his understanding of the status of hadith in learning Islamic teachings and he has also explained his point of view on how the contents of hadith should be reflected upon to properly benefit from them. His book is available for people to read. Before commenting upon Ghamidi Sahib’s attitude towards hadith, one should read his ideas on the subject carefully.

    A few other pieces of information might also help:

    i) Ghamidi Sahib taught for at least two years the meanings of ahadith of Sahih Muslim on AAJ television every Sunday for fifteen minutes. He has a plan to concentrate on doing research on ahadith after he has completed his translation and exegeses of Qur’an, if God permits him to live on.

    ii) Apart from Ibn Hazm, and may be a few others, no other first-generation scholar believed that information coming down to us through hadith was as authentic as the Qur’an and sunnah mutawatirah.

    iii) Hanafis, who were also referred to as people of Iraq, were called Ahlur Ray in the second century of Islamic history as against the others who were called Ahle Hadith. The distinction between the two was that while the former thought that it was preferable to base one’s religious opinion on ra’y (opinion based on analogy) in the light of Qur’an and sunnah than on the weak source of khabare wahid (information from one or a few individuals which is what hadith is), Ahle Hadith, Imam Shafi being the most prominent amongst them, thought that hadith should get preference over ra’y.

    iv) There are several mentions of Rafa Yadain in Bukhari and Muslim and yet Hanafis don’t make it a practice of theirs. The earlier Hanafi position on it was that the mention in hadith is inconsistent with the sunnah that was prevalent in the Muslim society (a similar stance is reported about Imam Malik in Bidayatul Mujtahid). The later Hanafi explanation has altered and they now claim that there were ahadith of prayers without Rafa Yadain too. The question is that if Hanafis can prefer some ahadith which are weaker in authenticity compared to others, what wrong has Ghamidi Sb done if he understands the meanings of ahadith in the light of Qur’an? There are many other examples of Hanafis ignoring authentic ahadith and preferring the opinion of their own scholars on the basis of some other argument. In Hajj, for example, authentic ahadith tell us that prophet, alaihissalaam, told Muslims on many occasions that if the sequence of rituals was altered by people inadvertently, it wasn’t a big problem; Hanafis insist that the person who has so done should sacrifice an animal (do ‘dum’) to compensate for it.

    Although it is nicely put in scholarly manner, but it should be clear that it is not due to our enduring that Quran is valid to date, it is Allah (SWT) who took the responsibility to preserve truth regarding this last revelation in what so ever form, and as we can see Hadith is more like explanatory tool to understand Quran firmly (and it has mention of things that are not even present in Quran or we may not deduce it), because in a lot of matters if one decides with his own intellect he will go astray.As Quran says it guides people (who understands it from the authenticated sourses) and lead them astry (to those who make up their own meaning from the verses of Quran and go astray) Therefore, we have to converge to the explanation provided by Ahadith. And as you can see in 2nd point he deliberately said something and then successfully escaped from the matter.
    My point is if something is in Hadith books (even something in History book and is nothing but the manifestation of truth) and after using all our tools (ilm-e-rejal, ilm-e-hadith, etc) we conclude its authenticity, we should also adhere to it. Our exploration of truth should be scientific rather sentimental.

    But regarding Tabliban issue (a scio-political matter) he pointed out very commendable things, those should be pondered upon.

    Regards

    cited from :
    Elegant Thinker on paklinks
     
  8. ejazji

    ejazji New Member

    Joined:
    Nov 19, 2008
    Messages:
    2
    Likes Received:
    0
    Please read bleow article from almawrid affiliated institute founded by Javed Ahmed Ghamdi. This is written by one of his student. Please read and try to understand how they are different from these Ullama who don't have patience to listen to a difference of opinion and their favourite thing is to decalre one non- muslim or Kafir. Pay attention to what "kind of Islam " they are teaching there.

    رات کی تاریکی میں مدینے کی ایک گلی میں دو دوست باتیں کرتے ہوئے جا رہے تھے۔ ایک نے دوسرے سے کہا، عمر رضي اللہ عنہ نے خالد رضي اللہ عنہ کو معزول کر کے اچھا نہیں کیا۔ دوسرے نے کہا، ہاں، میرا بھی یہی خیال ہے۔ انہیں معلوم نہ تھا کہ ان کے پیچھے عمر رضي اللہ عنہ بھی آرہے ہیں اور انہوں نے ان دونوں کی باتیں سن لی ہیں۔ حضرت عمر رضي اللہ عنہ نے اپنی آواز بدل کر کہا، تو پھر آپ کے خیال میں اب عمر رضي اللہ عنہ سے کیا سلوک کرنا چاہیے؟ دونوں نے بلا کسی توقف کے کہا، عمر رضي اللہ عنہ سے کیا سلوک کرنا؟ کیا مطلب؟ وہ امیر المومنین ہیں، بات تو ہم انہی کی مانیں گے، یہ تو ہماری ذاتی رائے ہے۔ اس پر عمررضي اللہ عنہ آگے بڑھے، اپنا تعارف کروایا اور ان سے کہا کہ میں اللہ کا شکر ادا کرتا ہوں کہ جس نے تم لوگوں جیسے ساتھی عطا کیے۔ عمر رضي اللہ عنہ نے کہا جب تک تم جیسے لوگ موجود ہيں، مسلمان شکست نہیں کھا سکتے۔

    سیدنا عمر رضي اللہ عنہ نے حضرت خالد رضي اللہ عنہ بن ولید کو فوج کی سپہ سالاری سے عین اس وقت معزول کر دیا تھا جب کہ ان کی شہرت بام عروج پر تھی اور وہ ہر معرکے میں کامیابی پہ کامیابی حاصل کیے جا رہے تھے۔ عوام میں یہ خیال جڑ پکڑ رہا تھا کہ کامیابی خالد کی وجہ سے حاصل ہوتی ہے۔ اس خیال کے رد اور اس بات کو ثابت کرنے کے لیے کہ کامیابی صرف اللہ کی مدد سے حاصل ہوتی ہے، عمر رضي اللہ عنہ نے خالد رضي اللہ عنہ کو معزول کر دیا۔ عمر رضي اللہ عنہ کے اس اقدام پر عوام میں اختلاف رائے پایا گیا جس کے اظہار کی ایک صورت وہ گفتگو تھی جو اوپر نقل ہوئی۔ سیدنا عمر رضي اللہ عنہ نے اس اختلاف رائے کی نہ صرف تحسین فرمائی بلکہ اللہ کا شکر بھی ادا کیا کیونکہ یہ اختلاف رائے کی وہ مثبت اور صحت مندصورت تھی جو معاشرے کو صحیح راہ پر گامزن رکھنے میں ایک اہم کردار ادا کرتی ہے۔

    کسی نظام یا سسٹم سے وابستہ رہتے ہوئے اس سے اختلاف رکھنا، یا اختلاف رکھتے ہوئے بھی اس سے وابستہ رہنا اور اس کی ترقی میں اپنا کردار ادا کرتے رہنا، ایک ایسی خوبصورت روایت ہے جو اسلامی معاشرے کا لازمی جزو رہی ہے۔ کسی بھی سسٹم سے اختلاف کی اجازت نہ دینا اصل میں اس کو الہامی ثابت کرنا ہے۔ یہ عمل جلد یا بدیر خود سسٹم کی تباہی کا باعث بن جاتا ہے۔ جس معاشرے یا ادارے میں یہ بات رواج پا جائے وہاں کے افراد میں بدترین قسم کی منافقت جنم لیتی ہے جو غیبت، چغلی سے ہوتی ہوئی حسد، کینے اور بغض تک جا پہنچتی ہے اور بالآخر سازشوں کو جنم دیتی ہے، جس سے نہ صرف ان افراد کا نقصان ہوتا ہے بلکہ ادارے اور معاشرے بھی رو بہ زوال ہوجاتے ہیں۔ یہی وہ نقصان تھا جس سے اپنے معاشرے اور افراد کو بچانے کے لیے اسلامی معاشرے کے بانی اور قائد سید ِدو عالم محمدِ عربی صلي اللہ عليہ وسلم نے نہ صرف اختلاف رائے کی اجازت دی بلکہ اس کی حوصلہ افزائی بھی فرمائی۔ حضور صلي اللہ عليہ وسلم نے ایک جماعت کو ایک مہم پر اس ہدایت کے ساتھ روانہ فرمایا کہ عصر کی نماز نہیں پڑھنی جب تک کہ تم فلاں مقام پر نہ پہنچ جاؤ۔ وہاں پہنچنے میں دیر ہوئی اور راستے ہی میں عصر کا وقت ہوگیا۔ اس موقع پر صحابہ کی اس جماعت میں اختلاف ہوا۔ ایک گروپ نے کہا کہ چونکہ عصر کی نماز کا وقت ہو گیا ہے اس لیے ہمیں یہیں نماز ادا کر لینی چاہیے۔ دوسرے گروپ نے کہا کہ حضور صلي اللہ عليہ وسلم نے کہا تھا کہ عصر کی نماز نہیں پڑھنی اس لیے ہم تو نہیں پڑھیں گے۔ اور وہاں جا کر پڑھیں گے چاہے قضا ہی کیوں نہ ہو جائے۔ پہلے گروپ نے کہا کہ اصل میں حضور کی ہدایت کا مطلب یہ تھا کہ تم کوشش کر کے عصر تک وہاں پہنچ جاؤ۔ اب چونکہ ہم لیٹ ہوگئے ہیں اس لیے ہمیں یہیں نماز ادا کر لینی چاہیے۔ لیکن دوسرا گروپ نہ مانا۔ اس لیے جن کی رائے نماز ادا کر لینے کی ہوئی، انہوں نے وہاں نماز ادا کر لی جبکہ باقی صحابہ نے وہاں جاکر قضا ادا کی۔ واپسی پر جب اختلاف رائے کا یہ معاملہ حضور کے سامنے پیش ہوا تو آپ نے دونوں کی تصویب فرمائی۔ معلوم ہوا کہ اخلاص کے ساتھ کسی حکم کا منشا سمجھنے میں بھی اختلاف ہو سکتا ہے اور اس کی ادائیگی کے طریق کار میں بھی۔ لوگ اگر سسٹم کے ساتھ مخلص ہیں تو ان کی عقل پر پہرے بٹھانے کے بجائے ان کی حوصلہ افزائی کرنا ہی نبوی طریقہ ہے۔

    جس معاشرے میں عقل پر پہرے بٹھانے کی کوشش کی جاتی ہے وہاں تعمیر کے بجائے تخریب جنم لیتی ہے کیونکہ عقل ایسی چیز ہے کہ جس کو پابند سلاسل نہیں کیا جا سکتا۔ اس نے بہرحال اپنا راستہ ڈھونڈنا ہوتا ہے اگر مثبت راستے بند کر دئیے جائیں گے تو پھر یہ منفی راہیں تلاش کر لے گی۔ اس لیے جو معاشرے یا ادارے ترقی کے خواہاں ہوتے ہیں وہ ہمیشہ اختلاف رائے کی نہ صرف قدر کرتے ہیں بلکہ اس کو پروان چڑھانے کی سعی بھی کر تے رہتے ہیں۔

    اسلامی معاشرے میں اللہ کے بعد صرف پیغمبر کی ذات ایسی ہوتی ہے جس کی غیر مشروط اطاعت کی جاتی ہے۔ پیغمبر کے حکم کے منشا کے سمجھنے میں تو اختلاف ہو سکتا ہے لیکن اس کے حکم کی اطاعت میں کسی اختلاف کی گنجایش نہیں ہوتی۔ عزت، اطاعت اور محبت کے حوالے سے پیغمبر کی ذات مسلم معاشرے میں ایک ایسا منفرد مقام رکھتی ہے کہ جس کا تقابل کسی بھی لیڈر سے نہیں کیا جا سکتا۔ اس عالی مقام اور سٹیٹس کے باوجود پیغمبرصلي اللہ عليہ وسلم نے نہ صرف لوگوں سے رائے طلب کی بلکہ بعض مواقع پر اپنی رائے کے برخلاف ان کی رائے پر عمل بھی کیا اور بعض تہذیبی اور نجی معاملات میں لوگوں کو یہ آزادی بھی دی کہ وہ چاہیں تو پیغمبر کے مشورے پر عمل کریں اور چاہیں تو نہ۔ ایک صحابیہ نے درخواست کی کہ انہیں طلاق دلوا دی جائے جبکہ ان کے خاوند انہیں بے حد چاہتے تھے۔ اس بنا پر حضور صلي اللہ عليہ وسلم نے صحابیہ سے کہا کہ اگر تم طلاق نہ لو تو بہتر ہے۔ صحابیہ نے کہا کہ یہ آپ کا حکم ہے یا مشورہ ہے، آپ صلي اللہ عليہ وسلم نے فرمایا کہ مشورہ ہے۔ چاہے تو عمل کرو اور چاہے تو نہ۔ اس پر صحابیہ نے کہا کہ پھر مجھے اس پر عمل سے معذور سمجھیے۔ چنانچہ حضور نے طلاق دلوا دی اور اسی طرح کا معاملہ آپ نے تابیر نخل کے معاملے میں کیا اور لوگوں سے کہا کہ تم لوگ کھیتی کے معاملات بہتر سمجھتے ہو۔ تم چاہو تو اپنی رائے کے مطابق کرتے رہو۔ یہی وجہ تھی کہ اسلامی معاشرے میں یہ بات کبھی مسئلہ نہیں بنی تھی کہ حدود اور آداب کی رعایت کرتے ہوئے اولاد، والدین سے اختلاف کر سکتی ہے یادلیل کی بنیاد پر شاگرد استاد سے اختلاف کر سکتا ہے یا مرید پیر سے اور رعایا حاکم سے اختلاف کر سکتی ہے۔ ہماری تاریخ میں اس بات پر تو تنقید یا بحث مل جاتی ہے کہ اختلاف کرتے ہوئے آداب کا خیال نہیں رکھا گیا یا حفظ مراتب کو نظر انداز کر دیا گیا لیکن یہ کبھی نہیں کہا گیا کہ اختلاف رائے کیوں کیا گیا۔ اسلامی تہذیب میں جس طرح حفظ مراتب کو ایک بنیادی قدر کی حیثیت حاصل ہے اسی طرح اختلاف رائے اور اظہار رائے کی آزادی کو بھی اہم قدر کی حیثیت حاصل رہی ہے۔

    یہ سوال کہ اختلاف رائے کیوں کیا گیا، مسلمان معاشروں میں بہت بعد کی پیداوار ہے اس کا نہ اللہ اور رسول کے حکم سے کوئی تعلق ہے اور نہ اہل علم کی روایات سے۔ ہمارے تمام جلیل القدر علما پر یہ بات روز روشن کی طرح عیاں رہی ہے کہ غیر مشروط سمع و طاعت کا حق صرف پیغمبر کی ذاتِ عالی کے لیے خاص ہے۔ اور ختم نبوت کی وجہ سے اب یہ حق قیامت تک کسی اور کے لیے خاص نہیں ہو سکتا۔ اور اگر کوئی ایسی کوشش کی جائے گی تو یہ اصل میں ''چھوٹے چھوٹے پیغمبر'' بنانے کی کوشش ہوگی۔ بدقسمتی سے اہل علم کا یہ رویہ ان کے پیروکاروں کی نظروں سے اوجھل ہوگیا اور انہوں نے انہی اہل علم کی آرا کو اتنا مقدس بنا لیا کہ ان سے اختلاف کی گنجایش کو حق و باطل کی جنگ بنا ڈالا۔ اسی رویے نے اسلامی تہذیب اور معاشرے میں نہ صرف جمود اور اندھی تقلید کو جنم دیا بلکہ انسانوں کو عقل کل اور دیوتا بنانے کی رسمِ قبیح کو بھی پروان چڑھایا۔ اور اب صورتِ حالات یہ ہوگئی ہے کہ مسلم معاشروں میں جگہ جگہ قائم مذہبی، سیاسی، معاشی، علمی اور عملی دیوتاؤں کو اپنا مفاد اسی میں نظر آتا ہے کہ اختلاف رائے کو ادب، محبت اور عشق کے نام پر غیر اسلامی باور کرایا جائے تا کہ ان کی 'دیوتائی' بھی قائم رہے اور ''گلشن'' کا کاروبار بھی چلتا رہے۔ ان حالات میں ہر وہ مسلمان جو اللہ کی رضا کا طالب، آخرت کی کامیابی اور مسلم معاشروں اور اداروں کی ترقی کا خواہاں ہو، اس پر لازم ہے کہ وہ جہاں بھی ہو بساط بھر اس بات کو عام کرے کہ آداب کی رعایت کرتے ہوئے، اختلاف رائے اسلامی تہذیب کے ماتھے کا جھومر ہے اور اللہ اور اس کے رسول صلي اللہ عليہ وسلم کی تعلیم کے عین مطابق۔ مگر خیال رہے کہ اس پیغام اور اس بات کو عام کرنے میں شایستگی اور تہذیب کا دامن ہاتھ سے نہ چھوٹنے پائے ورنہ ہم میں اور ان 'دیوتاؤں' میں کیا فرق رہ جائے گا۔۔۔!
     
  9. friends_korner

    friends_korner New Member

    Joined:
    Dec 3, 2008
    Messages:
    23
    Likes Received:
    0
  10. friends_korner

    friends_korner New Member

    Joined:
    Dec 3, 2008
    Messages:
    23
    Likes Received:
    0
  11. friends_korner

    friends_korner New Member

    Joined:
    Dec 3, 2008
    Messages:
    23
    Likes Received:
    0
    MuslimDistribution3b.jpg
    Sorry I am just testing the image upload thingy.
     
  12. friends_korner

    friends_korner New Member

    Joined:
    Dec 3, 2008
    Messages:
    23
    Likes Received:
    0
    [​IMG]
     

    Attached Files:

  13. friends_korner

    friends_korner New Member

    Joined:
    Dec 3, 2008
    Messages:
    23
    Likes Received:
    0
  14. engr58

    engr58 New Member

    Joined:
    Mar 13, 2009
    Messages:
    4,679
    Likes Received:
    0
    Location:
    Bahawalpur,dhahran(ksa)
    nice sharing from all...........informative
     
  15. asif_ch786

    asif_ch786 New Member

    Joined:
    Dec 13, 2008
    Messages:
    1
    Likes Received:
    0
    I would suggest to read his book Meezan before reading critics book. He has very strong arguments which are not easy to defy. He does not value the Hadith if it is against Quran.
     
  16. iamkingmaker

    iamkingmaker New Member

    Joined:
    Aug 9, 2011
    Messages:
    1
    Likes Received:
    0
    What do you mean by Islamic Perspective? There is just one Perspective and that is what's given in Quran and Sunna, everything else is just interpetations by one person or another. Ghamidi interprets Islam the same way the writers of these books are. If there are differences of opinions it doesnt mean that Ghamidi's perspective is different than "Islamic Perspective". No particular person can claim that his perspective is the "Islamic Perspective".
     

Share This Page